Woh Jo Dawedar Hai Shehr Me Keh Subhi Ka Nabz Snash Hun






وہ جو دعویدار ھے شہر میں کہ سبھی کا نبض شناس ھوں

کبھی آ کے مجھ سے تو پوچھتا کہ میں کس کے غم میں‌اداس ھوں


یہ مری کتاب حیات ھے اسے دل کی آنکھ سے پڑھ ذرا

میں ورق ورق ترے سامنے ترے روبرو ترے پاس ھوں


یہ تری امید کو کیا ھوا کبھی تو نے غور نہیں ‌کیا

کسی شام تو نے کہا تو تھا تری سانس ھوں تری آس ھوں


یہ تری جدائی کا غم نہیں کہ یہ سلسلے تو ھیں‌ روز کے

تری ذات اس کا سبب نہیں کئی دن سے یونہی اداس ھوں


کسی اور کی آنکھ سے دیکھ کر مجھے ایسے ویسے لقب نہ دے

ترا اعتبار ھوں جان من نہ گمان ھوں نہ قیاس ھوں
Comments
0 Blogger Comments